عمدۃ الأحکام؛ کتاب الطھارۃ:طہارت و پاکیزگی کی کتاب (قسط 3) فضل الرحمٰن خطیب وامام محمد مسجد نیلسن یو کے

حدیث نمبر: 7

عَنْ حُمْرَانَ مَوْلَى عُثْمَانَ بْنِ عَفَّانَ رضي اللهُ عَنْهُ: أَنَّهُ رَأَى عُثْمَانَ دَعَا بِوَضُوءٍ، فَأَفْرَغَ عَلَى يَدَيْهِ مِنْ إنَائِهِ، فَغَسَلَهُمَا ثَلاثَ مَرَّاتٍ، ثُمَّ أَدْخَلَ يَمِينَهُ فِي الْوَضُوءِ، ثُمَّ تَمَضْمَضَ وَاسْتَنْشَقَ وَاسْتَنْثَرَ، ثُمَّ غَسَلَ وَجْهَهُ ثَلاثاً، وَيَدَيْهِ إلَى الْمِرْفَقَيْنِ ثَلاثًا، ثُمَّ مَسَحَ بِرَأْسِهِ، ثُمَّ غَسَلَ كِلْتَا رِجْلَيْهِ ثَلاثًا، ثُمَّ قَالَ: رَأَيْتُ النَّبِيَّ ﷺ يَتَوَضَّأُ نَحْوَ وُضُوئِي هَذَا، وَقَالَ: «مَنْ تَوَضَّأَ نَحْوَ وُضُوئِي هَذَا، ثُمَّ صَلَّى رَكْعَتَيْنِ – لا يُحَدِّثُ فِيهِمَا نَفْسَهُ – غُفِرَ لَهُ مَا تَقَدَّمَ مِنْ ذَنْبِهِ»

بِوَضُوْءٍ: الوَضوُ بفتح الواو، معناه الماء الذي يتوضأ به، وبضمها فعل الوضوء.

حدیث مبارکہ کا سلیس ترجمہ

سیدنا عثمان بن عفان کے آزاد کردہ غلام حضرت حمران بن ابان ﷫ بیان فرماتے ہیں کہ بے شک انہوں نے حضرت عثمان بن عفان کو دیکھا کہ انہوں نے وضو کا پانی منگوایا، پھر اس برتن سے اپنے ہاتھوں پر پانی انڈیلا اوراپنے ہاتھوں (پہنچوں کو کلائی سے پیچھے والا ہاتھ) کو تین بار دھویا، پھر اپنا دایاں ہاتھ وضو کے پانی کے برتن کے اندر ڈالا پھر آپ نے کلی کی، ناک میں پانی چڑھایا اور ناک کو جھاڑا، پھر اپنے چہرے کو تین بار دھویا اور ہاتھوں کو کہنیوں سمیت تین بار دھویا، پھر اپنے سر کا مسح کیا، پھر اپنے دونوں پاؤں کو تین بار دھویا، پھر کہا کہ میں نے نبیﷺ کو وضو کرتے دیکھا جیسے یہ میروا وضو ہے اور رسول اللہ ﷺ نے فرمایا کہ جس نے میرے اس وضو کی طرح وضو کیا پھر دو رکعتیں ادا کیں اور ان دونوں رکعتوں میں اس کو اپنا ذاتی کوئی خیال نہ آیا، اللہ اس کے پچھلے گناہ معاف کر دیں گے۔ (صحیح بخاری، کتاب الوضو، باب المضمضة فى الوضوء، صحيح مسلم، كتاب الطهارة، باب صفة الوضوء وكماله)

حدیث مبارکہ کی مختصر تشریح اور اس سے اخذ ہونےوالے بعض مسائل:

a وضو کی تعلیم کا اہتمام کرنا۔

b کسی کو اس لیے دیکھنا تاکہ اس کے عمل صالح کو دیکھ کر خود بھی عمل کرے اور دوسروں کو بھی تعلیم دے۔

c کسی دوسرے سے خدمت وغیرہ لینا۔

d ایک عمل کی بعض چیزوں کو حدیث میں ذکر اور بعض کا عدم ذکر ہونا اور عدم ذکر سے عدم الشیئ کے لازم نہ ہونا کا ثبوت ہے۔ جیسا کہ اس حدیث میں وضو کی بعض چیزیں ذکر نہیں ہوئیں تو اس حدیث کی وجہ سے ان بعض چیزوں کا نہ ہونا ثابت نہیں ہوتا ہے۔ کیونکہ وہ دوسری احادیث صحیحہ میں بیان ہوئی ہیں مثلاً کلی اور ناک میں پانی چڑھانے اور جھاڑنے کی تعداد کا ذکر نہ ہونا، ہاتھوں کو کہنیوں تک دھونے کی تعداد کا ذکر نہ ہونا، کانوں کے مسح کا ذکر نہ ہونا، پاؤں میں سے پہلے کس کو دھویا جائے اس کا ذکر نہ ہونا، ٹخنے کےدھونے کا ذکر نہ ہونا۔ وغیرہ وغیرہ

e ہاتھوں کو دھوئے بغیر کسی برتن میں داخل نہیں کرنے چاہئیں۔

f اگر برتن وغیرہ کے اندر ہاتھ داخل کر کے وضو کرنا پڑے تو افضل یہ ہے کہ پانی میں دایاں ہاتھ داخل کیا جائے اور اس سے پانی باہر نکالا جائے۔

g وضو کے اعضاء کو دھونے کی زیادہ سے زیادہ تعداد تین ہے۔

h کلی اور ناک کو صاف کرنے کے لیے ایک ہی بار پانی لینا، اس آدھے چلو سے کلی کرنا اور آدھے سے ناک میں چڑھانا سنت ہے۔

i وضو کے اعضاء کو ترتیب سے دھونا۔

j ہاتھوں کو کہنیوں سمیت دھونا اور ہاتھوں کی ابتدا انگلیوں کے پوروں سے ہوتی ہے۔

k سر کا مسح ایک بار کرنا۔ صحیح حدیث کے مطابق مسح پیشانی کی طرف سے شروع کرنا اور ہاتھوں کو گدی تک لے جانا اور پھر وہاں سے پیشانی تک لے کر آنا ہے۔ البتہ اگر سر پر پگڑی ہو تو پگڑی پر مسح کرنا سنت ہے۔ سر کے کچھ حصے کا مسح کرنا اور باقی کو چھوڑ دینا کسی صحیح حدیث سے ثابت نہیں ہے، لہٰذا ایسا ایک مسلمان کو نہیں کرنا چاہیے۔

l پاؤں کو بھی اچھی طرح دھونا ضروری ہے۔ ننگے پاؤں پر مسح کرنا کسی صحیح حدیث سے ثابت نہیں ہے۔

m وضو کے بعد دو رکعت کی مشروعیت اور اس کی فضیلت۔ یہ دو رکعت نفل، سنت اور فرض میں سے کوئی بھی ہوسکتے ہیں۔

n وضو عبادت ہے اور تمام عبادات میں رسول اللہﷺ کی اطاعت واتباع ضروری ہے۔ جیسا کہ حضرت عثمان بن عفان نے اپنے وضو کو نبی ﷺ کے وضو کی طرح کا کہا۔

o نماز ادا کرتے وقت پوری توجہ نماز کی طرف رکھنے کی فضیلت کہ صرف دو رکعت سے پچھلے سارے (صغیرہ) معاف ہونے کی بشارت ہے۔

p رسول اللہﷺ کی تعلیمات کے مطابق کیے ہوئےعمل کی فضیلت اگرچہ وہ دیکھنے میں چھوٹا ہی کیوں نہ ہو جیسے صرف دو رکعت کی فضیلت۔

q صحابی رسول ﷺ کا اپنے عمل کو نبی ﷺ کے عمل کی طرح کہنے سے اس عمل کی اہمیت زیادہ ہو جاتی ہے اور اس سے یہ بھی معلوم ہوا کہ صحابہ کرام رسول اللہﷺ کی کمال اتباع کرتے تھے۔

r امام بخاری﷫ اس حدیث کو کتاب الوضو میں باب المضمضة في الوضو ’’یعنی وضو میں کلی کرنا ‘‘ کے تحت لے کر آئے، جس سے وضو میں کلی کرنے کی مشروعیت کا پتہ چلتا ہے، باوجود اس کے کہ قرآن مجید میں وضو کے متعلق آیت میں کلی کاذ کر نہیں ہے۔

s امام مسلم﷫ کی اس حدیث پر امام نووی﷫ نے کتاب الطهارة، باب صفة الوضوء وکماله کا عنوان قائم کیا ہے، یعنی طہارت وپاکیزگی کی کتاب میں وضو کا طریقہ اور اس کے کمال کا بیان۔ اس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ وضو سے مسلمان کو طہارت حاصل ہوتی ہے اور طہارت وپاکیزگی بڑے اور بلند اعمال میں سے ہے اور جو شخص طاہر رہنا چاہتا ہو تواس پر وضو لازم ہے، وضو کے بغیر طہارت حاصل نہیں ہوتی ہے اور جتنا وضو اچھے طریقے سے کیا جائے گا اتنی ہی زیادہ طہارت حاصل ہو گی اور وضو میں کمال رسول اللہ ﷺ کے وضو کی طرح کا وضو کرنا ہے۔

t اس حدیث میں لفظ وضو ’واؤ ‘ کے فتحہ (زبر) کے ساتھ اور اس کا وضو کا پانی ہے اور اگر ضمہ (پیش) کے ساتھ پڑھا جائے تو پھر اس کا معنی عمل وضو ہے اور اگر اس کو کسرہ (زیر) کے ساتھ پڑھا جائے تو اس سے مراد وہ برتن (لوٹا وغیرہ) ہو گا جس میں وضو کا پانی ہوتا ہے۔۔۔۔ اس لیے کہا جاتا ہے کہ وضو کو وضو میں ڈال کر وضو کرو۔ اس جملے میں پہلے لفظ وضو کے واؤ پر فتحہ دوسرے پر کسرہ اور تیسرے پر ضمہ ہے۔ واللہ اعلم

نغمگی قرآن کا حسن وجمال

شاعری میں وزن کی پابندیاں                                                                                               قید ہوتی ہیں سخن آرائیاں

ہوتا ہے محدود پروازِ خیال                                                                                                نظم کے اندر نہیں آزادیاں

بندشوں سے پاک ہے قرآں مگر                                                                                                ہے نئے آہنگ میں جادوبیاں

گو نہیں ہے شاعری قرآنِ پاک                                                                                                شعر کی موجود ہیں سب خوبیاں

قالبِ شعری لیے اسلوب ہے                                                                                                رب کی انسان سے سخن فرمائیاں

آیتوں میں ہے حلاوت موجزن                                                                                                اور سلامت کی بھی سحر انگیزیاں

جیسے اک کوزے میں بحرِ بے کراں                                                                                                قافیوں میں دفعتاً تبدیلیاں

صوتِ قرآں کا الگ اعجاز ہے                                                                                                لفظوں کی تکرار سے نیرنگیاں

آیتوں کا نظم ہے مربوط یوں                                                                                                مختصر کے بعد ہی طولانیاں

اس کلامِ با فصاحت کے سبب                                                                                                دل پہ کرتی ہیں اثر سچائیاں

ہے تلاوت میں لطافت کی کشش                                                                                                حسنِ قرأت کی ہیں بزم آرائیاں

آیتوں میں زیر وبم ہیں بے مثال                                                                                                نغمگی قرآن کا حسن وجمال

محمد فاروق نسیم

تبصرہ کریں