لمحۂ فکریہ ۔احمد منیر مرحوم، لندن

اُٹھتے ہوئے فتنوں کو دبانے کی بھی سوچیں                                                                                                                                    حالات کو معمول پہ لانے کی بھی سوچیں

ہر روز نیا المیۂ جو رو جفا ہے                                                                                                                                  ماحول کو محفوظ بنانے کی بھی سوچیں

خطرات سے خالی نہیں نفرت کے اَلاؤ                                                                                                یہ آتشِ بے دُود بُجھانے کی بھی سوچیں                                

ہر چند کہ مشکل ہے مگر امن کی خاطر                                                                                              آپس کے تنازعوں کو مِٹانے کی بھی سوچیں

رخصت ہوا قوّت سے دبانے کا زمانہ                                                                                              لوگوں کو محبت سے مَنانے کی بھی سوچیں

اُمت کے لئے باہمی رنجش نہیں اچھی                                                                                              گزری ہوئی باتوں کو بُھلانے کی بھی سوچیں

اللہ نے آپس میں بنایا ہمیں بھائی                                                                                              احساسِ اخوت کو جگانے کی بھی سوچیں

ہے آج بھی اک معجزہ اسلامی مساوات                                                                                              اسلام کی آغوش میں آنے کی بھی سوچیں

کچھ لوگ ابھی عظمتِ رفتہ کے امیں ہیں                                                                                      انسان کی توقیر بڑھانے کی بھی سوچیں

(احمد منیر مرحوم، لندن)

تبصرہ کریں